Home » اب کے یہ کیسی برسات ہوئ(Ab ke yeh kaisi barsaat hoy)

اب کے یہ کیسی برسات ہوئ
(Ab ke yeh kaisi barsaat hoy)

اب کے یہ کیسی برسات ہوئ
کہ ادھوری ہر ایک بات رہی

نہ وہ رونقیں نہ تھیں شوخیاں
چپ چاپ سے مینہ برسے گئ

رم جھم رم جھم بر سات میں
گہری خاموشی اور تھی تنہائ

دل کو عزیز جو احباب تھے
ہم مکتب جن سے تھی شناسائ

وقت کی رفتار میں کہیں بہہ گۓ
اک اک دریچۀماضی کھولتی گئ

ٹپ ٹپ ٹپ ٹپ برستی ہر بوند
سنگ اپنے مجھکو بھی بھگوتی گئ

ab ke yeh kaisi barsaat hoy
ke adhuri har aik baat rahi

nah woh ronaqai nah theen shokhiyan
chup chaap se meen barsay gai

rim jhim rim jhim Bar saat mein
gehri khamoshi aur thi tanhai

dil ko Aziz jo ahbaab thay
hum maktab jin se thi shanasai

waqt ki raftaar mein kahin beh gae
ik ik daricha maazi kholti gai

tup tup tup tup barasti har boond
sang –apne mujhkoo bhi bheegoti gai

Poet: – Rizwana aziz

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *