Home » اے دوست درد دل کا مداوا کیا نہ جائے(Ae dost dard dil ka madawa kya nah jaye)

اے دوست درد دل کا مداوا کیا نہ جائے
(Ae dost dard dil ka madawa kya nah jaye)

اے دوست درد دل کا مداوا کیا نہ جائے
وعدہ اگر کیا ہے تو ایفا کیا نہ جائے

آنے لگے ہیں وہ بھی عیادت کے واسطے
اے چارہ گر مریض کو اچھا کیا نہ جائے

مجبوریوں کے راز نہ کھل جائیں بعد مرگ
قاتل ہمارے قتل کا چرچا کیا نہ جائے

آئے گی اپنے لب پہ تو ہوگی پرائی بات
لازم ہے راز دل کبھی افشا کیا نہ جائے

وہ خود ہی جان لیں گے مرے دل کا مدعا
بہتر یہی ہے عرض تمنا کیا نہ جائے

ae dost dard dil ka madawa kya nah jaye
wada agar kya hai to aifaa kya nah jaye

anay lagey hain woh bhi ayadat ke wastay
ae charah gir mareez ko acha kya nah jaye

majabuuriyon ke raaz nah khil jayen baad merg
qaatil hamaray qatal ka charcha kya nah jaye

aaye gi –apne lab pay to hogi parai baat
lazim hai raaz dil kabhi afsha kya nah jaye

woh khud hi jaan len ge marey dil ka mudda
behtar yahi hai arz tamanna kya nah jaye

Poet: Hameed Jalandhari

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *