Home » اے دوست تو نے دوستی کا حق ادا کیا(Ae dost to ne dosti ka haq ada kya)

اے دوست تو نے دوستی کا حق ادا کیا
(Ae dost to ne dosti ka haq ada kya)

اے دوست تو نے دوستی کا حق ادا کیا
اپنی خوشی لوٹا کے میرا غم گھٹا دیاکہنے کو تو اپنے ہیں جہاں میں بہت مگر
اپنوں نے مجھ کو در سے دربدر کرا دیا

لڑتا رہا دنیا سے اپنوں کے لیے میں
اپنوں نے تو وفا کا مجھے یہ صلہ دیا

بڑے عرصہ دراز کے بعد غم ہوا تھا کم
ہنسنا ابھی سیکھا تھا کہ پھر سے رولا دیا

من کی لگی ہوئی آگ بجھی تھی ابھی ابھی
کچھ دیر ہی گزری تھی کہ گھر بھی جلا دیا

ae dost to ne dosti ka haq ada kya
apni khushi lota ke mera gham ghata diya

kehnay ko to –apne hain jahan mein bohat magar
apnon ne mujh ko dar se darbadar kara diya

larta raha duniya se apnon ke liye mein
apnon ne to wafa ka mujhe yeh sila diya

barray arsa daraaz ke baad gham sun-hwa tha kam
hansna abhi seekha tha ke phir se raula diya

mann ki lagi hui aag bujhi thi abhi abhi
kuch der hi guzri thi ke ghar bhi jala diya

Poet: Kamal Hussain Balti

Leave a Reply

Your email address will not be published.