Home » باربار سوچوں میں اکثر شب تنہائی میں(Baar baar sochon mein aksar shab tanhai mein)

باربار سوچوں میں اکثر شب تنہائی میں
(Baar baar sochon mein aksar shab tanhai mein)

باربار سوچوں میں اکثر شب تنہائی میں
وہ یار کیوں روٹھا اس روز شب تنہائی میں

ٹوٹے اس کے جذبات میرے دل کو توڑ گئے
ہائے وہ مجھے اشکوں میں بھیگتا چھوڑ گئے

غم عاشقی سے نکلے نہ تھے کہ غم دوستی نے جھنجوڑ دیا
مقدر ہی کچھ ایسا رہا جسکو چاہ اسی نے اپنا بنا کے چھوڑ دیا

گلہ کیا کریں کسی سے گزر ہی جاتی ہیں وحشت ہجر کی راتیں لیکن
چپکے چپکے سے تڑپنے کا فن سکھلا جاتی ہیں وہ گہری گھٹن بھری راتیں

تیری گردش یاد میرے اندر کے شجر خزاں کو تازہ کر جاتی ہے
رگ رگ میں بہتی تیری ہر شوخ مست ادا من کو میرے بہلا جاتی ہے

لب میرے ایسے میں تیرے لئے دعاؤں سے سرشار ہیں
یہی میری وفا دوستی کے کچھ وکھرے سے انداز ہیں

تیرے روٹھنے کا روگ اب بھی کہیں ہے لیکن ,دوست
ہم پھر بھی نذرانہ وفا لئے تیری چوکھٹ پر بیٹھے ہیں

اور انتظار کی گھڑیوں میں یہ سوچ رہی ہے کنول
وہ یار کیوں روٹھ گیا مجھ سے اس روز شب تنہائی میں

baar baar sochon mein aksar shab tanhai mein
woh yaar kyun rootha is roz shab tanhai mein

tootay is ke jazbaat mere dil ko toar gaye
haae woh mujhe ashkon mein bheegta chore gaye

gham aashiqii se niklay nah thay ke gham dosti ne jhnjorh diya
muqaddar hi kuch aisa raha jisko chaah isi ne apna bana ke chore diya

gilah kya karen kisi se guzar hi jati hain wehshat hijar ki raatain lekin
chupkay chupkay se tarpne ka fun sikhla jati hain woh gehri ghutan bhari raatain

teri gardish yaad mere andar ke shajar khizaa ko taaza kar jati hai
rigg rigg mein behti teri har shokh mast ada mann ko mere behla jati hai

lab mere aisay mein tairay liye duaon se sarshar hain
yahi meri wafa dosti ke kuch wakhere se andaaz hain

tairay rothney ka rog ab bhi kahin hai lekin, dost
hum phir bhi nazrana wafa liye teri chokhat par baithy hain

aur intzaar ki gharion mein yeh soch rahi hai kanwal
woh yaar kyun roth gaya mujh se is roz shab tanhai mein

Poet: – Rana Kanwal

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *