Home » یوں محفل نہیں ہوتی اور نظارے نہیں ہوتے(Yun mehfil nahi hoti aur nazare nahi hotay)

یوں محفل نہیں ہوتی اور نظارے نہیں ہوتے
(Yun mehfil nahi hoti aur nazare nahi hotay)

یوں محفل نہیں ہوتی اور نظارے نہیں ہوتے
یوں چاند كے پہلو میں ستارے نہیں ہوتے

ہَم اِس لیے کرتے ہیں آپ کی فکر
کیونکہ دِل كے قریب سارے نہیں ہوتے

yun mehfil nahi hoti aur nazare nahi hotay
yun chaand ke pehlu mein setaaray nahi hotay

ham iss liye karte hain aap ki fikar
kyunkay dil ke qareeb saaray nahi hotay

Poet: –

Leave a Reply

Your email address will not be published.